الوسوم » نظام

ما همه با هم هستیم!

بببنید اعتراضات مردم رو! ما تا پیروزی کامل با هم هستیم 😊😏

ما سران مملکتی دزد نمیخوایم!

چند روز پیش تو بی ار تی یه اقای نسبتا مسنی چندین مرتبه با صدای بلند میگفت من غلط کردم انقلاب کردم! شاه به اون خوبی😌

انتخابات

تقریبا یک سال بعد از این ماجرا همزمان شد با انتخابات سال ۸۸ و ماجراهایی که تقریبا همه مون در جریانشونیم…هه

یادمه اون دوران داییم که تویه دانشکده تو خیابون ولیعصر کار میکرد میگفت،دست یکی از دوستاش که رفته بود سمت نرده ها تا ببینه چه خبره توسط مامورین ضد شورشی که حتی ایرانی هم نبودن (نشکست) خورد شد!!! دوستی داشتم که دیگه ندارم! چرا؟! چون اعتراض کرد به رأیش که نادیده گرفته شد!

عجیبه نه؟ تو کشورمون دموکراسی موج میزنه نه؟! اینو که همه میدونن!

کاش سنم بیشتر از اونی بود که بودم و عقلم به این میرسید که باید برای نداشته هامون اعتراض کنیم.

فعلا…

"قمری نظام"

🌙 *قمری نظام تقویم* 🌙

*( آخری حصہ )*

قمری مہینے میں جو اسلامی تہوار آتےہیں ان تہوار کے انتظار کی جو کیفیت ہوتی ہے اسکی لذت ہی کچھ اور ہوتی ہے جیسے عیسائی ایسٹر کا تہوار مناتے ہیں ان میں انتظار کی وہ کیفیت ہو ہی نہیں سکتی کیونکہ ان کو معلوم ہے کہ ہر سال 25 دسمبر کو ہی ہمیں یہ تہوار منانا ہے۔ اور مسلمانوں کے ساتھ کیا ہوتا ہے یہ ہم اپنے دلوں سے خود پوچھ لیں ۔ ایک عجیب سی خوشی اور تعلق جڑا رہتا ہے ۔انسانی فطرت ہے کہ وہ یکسانیت سے بیزار ہو جاتا ہے ۔ یہ اللہ کا ہم پر بہت بڑا احسان ہے کہ خوشی کی جو کیفیت قمری نظام کے ذریعے ہمیں دی وہ کسی اور نظام میں ہو ہی نہیں سکتی ۔
قمری سال کا آغاز محرم الحرام سے ہوتا ہے اسکے بعد
صفر ربیع الاول ، ربیع الثانی جمادی الاول جمادی الثانی ، رجب، شعبان ، رمضان ، شوال ، ذیقعد اور ذی الحج پر اختتام ہوتا ہے ۔ اہم بات یہ کہ قمری ہجری سال اور اسکی تاریخ ( Date) کو یاد رکھنا یہ ” فرض کفایہ ” ہے ۔ اگر ایک علاقے میں کسی کو بھی قمری سال اور تاریخ یاد نہیں تو پورے علاقے والے گناہگار ہوں گے ۔ اور اگر چند لوگوں کو ہی معلوم ہے تو مسلمان گناہ سے تو ہٹ جائے گا لیکن مسلمان غیرت اور حمیت کا تقاضا ہے کہ اسلامی تاریخ کو یاد رکھے ۔ شرعی احکامات جتنے بھی ہیں جیسے زکوٰۃ ، روزہ ، حج ، قربانی وہ سب قمری

اعتبار سے ہی ہیں ۔ پھر قمری تاریخ کا یاد رکھنا عبادت کو پورا کرنے کے لئے ضروری بھی ہوا تو یہ بھی عبادت ہو گئی ۔ قمری تاریخ کااستعمال انبیاء علیہ السلام نے کیا ۔ صحابہ کرام رضوان اللہ تعالی علیہ اجمعین نے کیا اولیاء نے کیا تو اگر ہم بھی کریں گے تو ہماری نسبت بھی ادھر ہو جائے گی اور خیر و برکت بھی رہے گی ۔ قمری نظام کے استعمال سے اسلام کا تشخص باقی رہتا ہے ۔ قمری سال کو بلکل چھوڑ دینا اور صرف عیسوی سال کو استعمال کرنا اس سے علما نے منع فرمایا ہے ۔
اللہ تعالی ہمیں اپنے اس قانون کو استعمال کرنے کی توفیق عطا فرمائے آمین

ماخوذ از بیان

*حضرت حافظ محمد ابراہیم نقشبندی دامت برکاتہم*
*خلیفہ مجاز حضرت شیخ ذوالفقار احمد نقشبندی دامت برکاتہم*

*تحریر : ✍ ام ابی ھریرہ*

*عشق الہی الکاتبات*

First blog post

This is your very first post. Click the Edit link to modify or delete it, or start a new post. If you like, use this post to tell readers why you started this blog and what you plan to do with it.

قانون